کیا یہ کُھلا تضاد نہیں؟؟؟

موضوع: رونا پیٹنا

آج مجھے پتا نہیں کیوں سہیل وڑائچ صاحب کی یاد آرہی ہے ، آپ حیران ہوں گے کہ امتحانات کے دوران مجھے اتنی سخت یاد کیوں آرہی ہے بلکہ میرا تو دل کر رہا ہے کہ ابھی “سیٹ کام” اور “پی اے سسٹم” کے ساتھ دماغ خراب کرنا چھوڑ کر فوراً یوٹیوب پر جاوں اور ایک دِن جیو کے ساتھ لگا لوں۔ اصل وجہ ساری یاد کہ انکا ایک سوال ہے جسکا آخر کچھ اس قسم کا ہوتا ہے ” کیا یہ کُھلا تضاد نہیں ؟” میں جب بھی پروگرام دیکھ رہا ہوں اور یہ سوال آجاے تو میں اسکو پاز کر کے امی کو بلاتا ہوں اور پھر چلاتا ہوں جب میں نے دو تین دفعہ ایسا کیا تو ایک دن امی نے پوچھا کہ ” کیا یہ لوگوں کے تضاد ہی ڈھونڈتا رہتا ہے ؟”اس وقت میرے دماغ میں بھی یہ سوال گردش کر رہا ہے ۔

خیال کریں کہ آپ نے ایک جاسوس پکڑا ہے ، بڑے اعلیٰ پاے کا دوسرے ملک کا جاسوس ۔ اب کیا یہ کھلا تضاد نہیں کہ ملٹری اس کو نظر انداز کر کے کہے کہ ہم عدلیہ پر چھوڑتے ہیں ؟؟؟ مجھے یہ سمجھ نہیں آرہی کہ جب سارے بڑے بڑے جاسوس تم نے پچاس روپے لے کر ، چاے پانی کا خرچہ لے کر ، بچوں کے لیے مٹھای کے پیسے لے کر مجرموں کو چھوڑنے والی ہجڑا پولیس کے لیے چھوڑنے ہیں تو یہ “ایم آی ” (ملٹری انٹیلی جنس” اور “آی ایس آی ” (انٹر سروسز انٹیلی جنس) تیل بیچنے کے لیے بنای ہیں ؟؟؟؟

دیکھیں جی طوائف تو طوائف ہی ہوتی ہے ، چاہے وہ پچاس روپے لے کر کسی بس ڈرائیور کے ساتھ چلی جاے یا دس ہزار لے کر کسی ایم این اے یا کسی بڑے بزنس میں کے ساتھ ، رہے گی تو وہ طوائف ہی نہ۔ اب میں یہ سمجھنے سے قاصرہوں کہ اس ملک کا کیا بنےگا جسکو طوئف چلا رہی ہو ، ویسے ڈیمن ڈیوس تو پہلے دن ہی چُھٹ جاتا لیکن طوائف اپنا ریٹ بڑھا رہی تھی۔ اور ریٹ بڑھوانے کے لیے کو تُرپ کا پتا تو ہونا چاہیے نہ ۔

خیر ہمیں اس سے پریشان ہونے کی کوی ضرورت نہین ، شیدا اور طافا اب پھر تھڑے پر بیٹھ کر صرف گلاں باتاں ہی کر رہے ہوں گے ۔ اور جی ایچ کیو میں ریٹ بڑھوانے کے طریقے ڈِس کس ہو رہے ہوں گے ، قاف لیگیے مونس الہیٰ کو باہر نکلوانے کے لیے پپلیوں سے ڈیل کریں گے ، اور ہمارے گنج شاہ صاحب کسی پنڈ میں جا کر تصویریں کھچوائیں گے ۔ اگلے دن تحریکِ انصاف والے نمبر ٹانگنے کے لیے جماعتیوں کے ساتھ لاٹھی چارج میں ڈنڈے کھائیں گے صورت حال کو سمبھالنے کے لیے امریکن فیکٹری سے تازہ تازہ تیار شدہ طالبان ایک اور سلمان تاثیر اور شہباز بھٹی کو جہنم واصل کر کے دس امریکن میڈ تنظیموں کی طرف سے شائع شدہ پمفلٹ پھینک کر طالبان کا ڈر بٹھلائیں گے ۔ اور پھر ایک بیروکریٹ کی بیٹی امریکی یونیورسٹی سے تازہ تازہ فاضل ہو کر شدت پسند ملا اور مولویوں اور طالبان کے خلاف اپنے انگریزی بلاگ میں لکھے گی ۔ اگلے دن امریکی ایمبسی میں شرابی محفل کے دوران اس کے ابا کو امریکی کاونسلیٹ آفیسر ترقی کی خوشخبری سنا رہی ہو گی ۔ اور اسی وقت امریکی آرمی ایک اور عافیہ صدیقی کو پکڑ کر لیجا رہی ہو گی

لیکن ہمیں اس سب سے پریشان ہونے کی ضرورت نہیں شیلا اور جاوید عاطف اسلم کے کانسرٹ میں جا رہے ہوں گے ، شیدا اور طافا آج پھر تھڑے پر بیٹھے نرگس کے ٹمھکوں پر داد دے رہے ہوں گے ، عنیقہ آنٹی کو آج پھر بس میں ایک آنٹی برقع میں بچے کو قرآن پڑھاتی نظر آئیں گی اور تنقید کا ایک اور موضوع شروع ہو جاے گا۔

تبصرے بذیعہ فیس بک۔۔۔۔

کیا یہ کُھلا تضاد نہیں؟؟؟ پر اب تک 13 تبصرے

  • جعفر

    Thursday، 17 March 2011 بوقت 4:33 am

    جتنے تضاد گنواٗے ہیں
    یہ کھلے تضاد نہیں ہیں
    ننگے تضاد ہیں

  • یاسر خوامخواہ جاپانی

    Thursday، 17 March 2011 بوقت 8:04 am

    معلوم تو تھا اسے چھوڑ ہی دیا جائے گا۔
    ڈرامہ دیکھ کر سمجھے شاید کچھ حیا کا قطرہ ہے ان میں۔

  • منیر عباسی

    Thursday، 17 March 2011 بوقت 8:41 am

    اب دل ہی نہیں کرتا احتجاج کو۔ کیا کریں۔اس کا علاج بھی کچھ ہے کہ نہیں اے چارہ گر؟

  • محمد وقاراعظم

    Thursday، 17 March 2011 بوقت 8:42 am

    بس جی ان کے ڈرامے کو سچ سمجھ بیٹھے اور جب حقیقت آشکار ہوئی تو اس اجتماعی بیغیرتی پر جذبات قابو میں ہی نہیں آرہے۔۔۔۔۔

  • zhassankhan

    Thursday، 17 March 2011 بوقت 8:50 am

    اب تو آنٹی رینج رؤور میں آتی جاتی ہیں ……… اور یہ اپنے جعفر استاد نے ٹھیک کہا……….. یہ الف ننگے تضاد ہیں

  • Tauqeer

    Thursday، 17 March 2011 بوقت 10:19 am

    Well that is a standard procedure I guess, they usually release foreign spies. That's what USA did recently with Russian spies?

  • DuFFeR - ڈفر

    Thursday، 17 March 2011 بوقت 10:38 am

    very well said yar

  • محمد وقاراعظم

    Thursday، 17 March 2011 بوقت 11:43 am

    او خدا کے بندے دونوں نے اید دوسرے کے جاسوسوں کا تبادلہ کیا تھا۔ یعنی اپنے بندے کو چھڑانے کے بدلے میں انکا بندا چھوڑا۔ آپ نے غلط اندازہ لگایا ہے۔

    اگر ایسا ہے تو پھر تو کیا ہی بات ہے۔ جاسوسوں کے مزے ہیں۔۔۔۔

  • Tauqeer

    Thursday، 17 March 2011 بوقت 7:52 pm

    Haan waise behter hota Dr. Afia ko swap ker letay, laiken again she has got dual nationality I guess?

  • saadblog

    Thursday، 17 March 2011 بوقت 2:56 pm

    میرے پاس اور کچھ نہیں باقی بچا کہنے کو

  • UncleTom

    Thursday، 17 March 2011 بوقت 12:06 am

    آپ تمام ساتھیوں کے کمنٹنے کا شکریہ

  • عادل بھیا

    Thursday، 17 March 2011 بوقت 1:50 pm

    میں نے آپکا بلاگ پہلی مرتبہ وزٹ کیا مگر ماشاءاللہ تحریر بہت پسند آئی

  • UncleTom

    Thursday، 17 March 2011 بوقت 4:41 pm

    بہت شکریہ عادل بھیا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *