کاش میں غائب ہو سکتا

موضوع: احساسات و آپ بیتیاں, شاعری

کبھی کبھی میں سوچتا ہوں

کہ کاش میں غائب ہو سکتا

اس دنیا سے ان لوگوں سے
اس دنیا کے سب دھوکوں سے

آزاد فضا میں گھومنے والے
ٹھنڈی ہوا کے جھونکوں سے

وہ جھونکے جنکو چھونے کی
کچھ خواہش میرے دل میں تھی

اُن آنکھوں کے نیچے نیچے
آنسو کے بہتے قطروں سے

اے کاش میں غائب ہو سکتا
اُن سرد سی گہری نظروں سے

عظیم شاعر و ادیب انکل ٹام

 

تبصرے بذیعہ فیس بک۔۔۔۔

کاش میں غائب ہو سکتا پر اب تک 7 تبصرے

  • علی

    Monday، 27 February 2012 بوقت 8:16 pm

    mr. Pakistan :p

  • محمد یاسرعلی

    Monday، 27 February 2012 بوقت 3:37 am

    بہت خوب

  • عمران اقبال

    Monday، 27 February 2012 بوقت 5:44 am

    زبردست۔۔۔

  • وسیم رانا

    Monday، 27 February 2012 بوقت 6:29 am

    واہ۔۔۔واہ۔۔۔

  • افتخار اجمل بھوپال

    Monday، 27 February 2012 بوقت 10:56 am

    چچا ٹام جی ۔ تُسی تے چھا گئے او

  • ام عروبہ

    Monday، 27 February 2012 بوقت 1:20 pm

    اسلام علیکم
    خواہش تو کچھ معصوم اور بچگانہ ہے مگر معاملہ کچھ گھمبیر سا لگتا ہے۔ ۔ ۔

    بچپن میں ہمیں بھی غائب ہو جانے کا شوق تھا مگر اب تو بس کبھی کبھی ناگوار لوگوں کو غائب کر دینے کو دل چاہتا ہے –

  • kamal ashraf

    Monday، 27 February 2012 بوقت 6:52 am

    aah, zalim.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *