آدم بیزار بنتا جا رہا ہوں

میں نے دنیا کو ہے کچھ دور چھوڑا مگر خوش حال بنتا جا رہا ہوں مجھے کیوں ڈھونڈتی ہے زندگانی بہت گمنام بنتا جا رہا ہوں میری آوارگی بھی گشتِ تنہا بہت انجان بنتا جا رہا ہوں شبِ صحرا میں ہوں تنہا اکیلا آدم بیزار بنتا جا رہا ہوں      عظیم شاعر و ادیب انکل ٹام

مکمل تحریر پڑھیں